جنابِ فاطمہ زہراؑ
 
وصف میں آپ کے مداحوں نے کیا کیا نہ کہا
تا
کیوں نہ ہوں خلق میں جب ایک رہی ہیں زہراؑ
وصف  میں  آپ  کے  مداحوں  نے  کیا کیا نہ iiکہا          کون   سی   بات   ہے   جو  چھوڑ  گئے  ہیں  iiشعرا
لاکھ  کچھ  کہہ  گئے  پھر  کچھ  بھی  نہیں  ہے  iiبخدا          ختم     پر     مدحتِ     زہرا    کا    فسانہ    نہ    iiہوا
وصف  جس  بی  بی  کا  قرآن  میں  بھگوان iiکرے          اس   کی   تعریف   بھلا   کیا   کوئی   انسان  iiکرے
٭٭٭ 
اللہ    اللہ    یہ    شرف   باپ   نبیؐ   پوتے   iiامام          پایا    شوہر   بھی   مقدر   سے   خدا   کا   ہم   iiنام
خادمہ    حوریں    فرشتے    درِ   دولت   کے   غلام          نعمتیں   اپنی   کیں   اللہ   نے   سن   ان   پر  iiتمام
پیشِ    حق    کون   سی   بی   بی   کی   توقیر   ہوئی          کس   کی   زہراؑ   کی   سی  کونین  میں  تقدیر  ہوئی
٭٭٭ 
گلشنِ   عالمِ   امکاں   میں   انھیں   کی   ہے   بہار          ان    کی   جبریلؑ   نے   کی   آسیا   سائی   سو   iiبار
نسل  میں  ان  کی  جہاں  میں  ہوئے  گیارہ iiاوتار          آئے  فردوس  سے  ان  کے  لئے  میوے  کئی  بار
ان  کی  خدمت  سے فرشتوں نے بھی عظمت iiپائی          پر   ملے   جب   کے   مقرب   ہوئے  عزت  iiپائی
٭٭٭ 
ناز     برداریاں     سہتے     تھے     محمدؐ     ان    iiکی          قدر   کرتے   تھے   جبریلؑ   کے   مرشد   ان   iiکی
پانچ   معصوموں   میں  ہے  تیسری  مسند  ان  iiکی          مدح   کی   مرے   بھگوان  نے  بے  حد  ان  iiکی
چار  جب  تک  رہے  چادر  میں  نہ  حق  کو  iiبھایا          جب    یہ    داخل    ہوئیں    تطہیر    کا   آیہ   iiآیا
٭٭٭ 
اسد   اللہ  کی  مونس  بھی  ہیں  ناموس  بھی  ہیں          شمع   دیں   بھی   ہیں  ایمان  کی  فانوس  بھی  ہیں
حق سے بھی انس ہے بھگوان سے مانوس بھی ہیں          عکس   بھی  نورِ  امامت  کا  ہیں  معکوس  بھی  iiہیں
حق  تو  یہ  ہے  کہ  جو  حیدرؑ  ہیں  وہی  ہیں iiزہراؑ          کیوں  نہ  ہوں  خلق میں جب ایک رہی ہیں iiزہراؑ
٭٭٭