جدید مرثیہ
 


احساسات کی دوہری معنویت کا حسینی شاعر
محمد شفیع بلوچ (جھنگ)

کربلا کے واقعات تاریخِ انسانیت کا وہ عظیم المیہ ہںو جن مںن ایک طرف جورو جفا کی انتہا ہے تو دوسری طرف حسینیت کے روپ مںل استقامت، عزم، قوتِ عمل، معیارِ قربانی، صبر و قناعت، استغنا و توکل، صفائے قلب، سخاوت، شجاعت، راست بازی اور ثباتِ قدم کی انتہا ہے۔ کرب و بلا مںع حسینؓ کے خون سے توحید کی اک نئی تفسیر لکھی گئی۔ اپنی اثر آفرینی کے لحاظ سے کربلا کے واقعات شروع دن سے ہی تازگی لئے ہوئے ہں ۔ بیدار دُنیا کا شاید ہی کوئی گوشہ ایسا ہو جہاں حق و باطل کے معرکے مںس حسینؓ کا نام بطور سچائی اور حق کی علامت کے طور پر نہ پہنچا ہو۔ دنیائے ادب مںش تو حسینؓ اور حسینیت کا شمار نہ صرف مذہبی معتقدات مںہ ہوتا ہے بلکہ تخلیق کاروں کا ہر دو سے ایک اعلیٰ سطح کا مستحکم جذباتی تعلق بھی قائم ہے۔ اس جذباتی تعلق نے پہلے اعتقادی صورت اختیار کی اور بعد مںا رثا اور نوحہ کی یہی کیفیت ارتقائی منزلیں طے کرتی ہوئی سلام کی صنف مںف ڈھل گئی جو بالآخر شہدائے کربلا اور بالخصوص حضرت امام حسینؓ کی ذاتِ والا صفات کے رثا اور مناقب کے بیان کے لئے وقف ہو گئی۔
سلام کی روایت عربی اور فارسی سے کہںا بڑھ کر اُردو مںا پروان چڑھی۔ مذہب و عقیدت سے گہری وابستگی کے باعث اس صنفِ سخن کو اردو مںی قابلِ اعتنا نہںک سمجھا گیا اور یہ عجب یوں نہںت کہ مذہبی ادب کے ساتھ شروع سے ہی ایسا سلوک ہوتا آیا ہے، حالانکہ مذہب ایسا لطیف اور پاکیزہ احساس ہے کہ جس کے ساتھ آدمی کا جذباتی رشتہ ہوتا ہے اور مذہب کے خلاف کوئی بھی بات آدمی کو نہ صرف ناگوار گزرتی ہے بلکہ وہ مرنے مارنے پر بھی اُتر آتا ہے کیا سچی مذہبی عقیدت تنگ نظری مںص شمار کی جا سکتی ہے؟ میرے خیال مںر اس لئے نہںر کہ معتقدات اور محسوسات افراد اور معاشرے دونوں سطحوں پر پائے جاتے ہں اور کسی بھی مہذب معاشرے مں ان کا شمار اعلیٰ اقدار مںو ہوتا ہے۔
مذہبی شخصیات کو خراجِ عقیدت پیش کرنے کے یوں تو کئی اسالیب ہںی تاہم ان مںے انفرادیت کی حامل صنفِ سخن ہے۔ سلام کی ہیئتِ ترکیبی کے پیچھے قصیدے اور مرثیے کے ساتھ ساتھ غزل کی بھرپور روایت بھی موجود ہے۔غزل کی طرح سلام ایک ایسی صنف ہے جس کے مختلف اشعار مںے متنوع مضامین و خیالات پائے جاتے ہںے۔ سلام کا تشکیلی مزاج غزل سے یوں بھی زیادہ مماثل ہے کہ ممدوح کے اوصافِ حمیدہ کو جس طرح حۂطج نظم مںں لایا جا سکتا ہے وہ کسی اور صنفِ سخن مںے اس درجہ ممکن نہں ۔
اس قدر تمہید طولانی کا مقصد مدعا یہ ہے کہ عصر حاضر کے روایت و جدت کے حسین امتزاج کے حامل شاعر محمد منیر حسین گستاخ بخاری کے سلاموں کے بارے مں گفتگو کی جائے جو انہوں نے سیّدنا امام حسینؓ اور دیگر شہدائے کربلا کے بارے مںِ رقم کئے ہںش۔ عقیدت احترام اور محبت کے احساسات کی دوہری معنویت گستاخ بخاری کے ہاں یوں بھی اُبھر کر سامنے آتی ہے کہ خود ان کا تعلق بھی حسینی خانوادے سے ہے سلام کہنے کے لئے ممدوح کی شخصیت کے مختلف پہلوؤں کے ادراک کے ساتھ ساتھ زبان و بیان پر بھی مکمل دسترس حاصل ہونا از بس ضروری ہے اور یہ سب خوبیاں گستاخ بخاری مں بدرجۂ اتم موجود ہںح۔
غزل کی تشکیلی مزاج مںم عشق اور سلام کے تشکیلی مزاج مںک اعتقاد کو بالادستی حاصل ہوتی ہے۔ گستاخ بخاری بنیادی طور پر غزل کے شاعر ہںق۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے سلاموں کے زیر مطالعہ مجموعے مں سبھی اجزاء کے علاوہ متغزلانہ ایمائیت بھی پائی جاتی ہے انہوں نے ادبی اور فنی عنصر کو قائم رکھتے ہوئے اپنے سلاموں مںہ منقبتی، مناجاتی اور رثائی گوشے پیدا کئے ہںا اور اپنے معتقدات مںم حمد، نعت اور منقبت وغیرہ کو بھی شامل کیا ہے۔ حضرت علی کرم اﷲ وجہہ کے بارے کہتے ہں :

شریعت جب ضرورت مند ٹھہری
تدبر     بانٹتا     مولا     علیؓ     iiہے
بوقت      شدتِ      کفار     iiگستاخؔ
نبیؐ     کا    مدعا    مولا    علیؓ    iiہے
سلام بنیادی طور پر ایک ایسی اعتقادی صنف ہے جس کی تہہ مں رثائی رنگ ہوتا ہے۔ گستاخ بخاری نے اس پہلو کو بھی مد نظر رکھ کر بہت خوبصورت اشعار کہے ہںم :

شب     عاشور    کا    تصور    iiکر
اور پھر کاٹ کر دِکھا اِک رات
____
اہلِ                           ایمان                           iiکا
اس                         قدر                        iiحوصلہ
ریت                         تپتی                         iiہوئی
خون                           بہتا                          iiہوا
تھے                           بہتر                          iiمگر
ولولہ                            لاکھ                           کا
تجھ                          کو                         انسانیت
مِل                            گیا                           iiرہنما
مرے    سجدے    کا    وقت    آنے    لگا   iiہے
بدن      جاگیر     زخموں     سے     بھری     ہے
نوحہ  گری  ہواؤں  میں  کس  نے  اُچھال  دی
خواہش ہے کس کی حشر تک مدحت حسین کی

رثا میں ڈوبے ہوئے یہ متغزلانہ اشعار دیکھیں۔

زبانیں       سوکھ       کر      کانٹا      ہوئی      iiہیں
کہیں       سے       ابرِ       رحمت      بار      دیکھو
بدن     زخموں     سے     گلشن    بن    چکا    iiتھا
کھلا       نہ       یوں       کہںچ       گلزار      دیکھو
جتنے بھی کارواں میں تھے حسنِ عمل کے ساتھ
شائق    شہادتوں    کے    قرینے   کو   لے   چلے
میں   تیرے   پاؤں  کے  نیچے  ثواب  رکھ  iiدیتا
میرا    حوالہ    تیری    طرح    کو   بہ   کو   ہوتا
رثا کے علاوہ منقبتی اور اخلاقی مضامین کو بھی متغزلانہ آہنگ اور اسلوب مںں بڑے خوب صورت انداز مںا پیش کیا ہے:

کربلا      اک     مثال     ٹھہر     iiگئی
ہوتے  ہیں  زندگی میں سو iiصدمات
کم   ہی   اتنے   قریب   ہوتے   iiہیں
جیسے    شبیر    اور    خدا    کی    iiذات
آپ     نے    دیکھ    تو    لیا    ہو    iiگا
تھے   بہتر  کے  اک  سے  احساسات
کون     گستاخ     بھول     سکتا    iiہے
سطوتِ     دین     اور    غمِ    سادات
درس گستاخ کو دیتی ہے وفائے شبیر
ہر  وفادار  کا آقا ہے حسینؓ ابن iiعلیؓ
نہ    کربلا    نے    چمن    میں   دیکھو
حسینؓ   ہر   اک   زمن   میں  iiدیکھو
لہو    مں   ڈوبے   وفا   کے   iiجذبے
حسینیت     کے    بدن    میں    iiدیکھو
علیؓ   کی   صورت،   نبی   کی  iiسیرت
حسینؓ     کے    بانکپن    میں    iiدیکھو
حسینؓ     تم     کو     بچا     گیا     iiہے
تم   اپنے   گستاخ   من   میں   iiدیکھو

ذکرِ حسین، گستاخ بخاری کی طرح ہر درد مند دل رکھنے والے کے نزدیک نہ صرف باعث ثواب ہے بلکہ وجہ تکریم بھی ہے او ریہ کیوں نہ ہو یہ حوالہ تو زمان و مکان کی حدوں کو بھی عبور کر گیا ہے۔
حسین     صبر     و    شجاعت    میں    شاندار    iiرہا
یزید    جیت    گیا    پھر    بھی    بے    وقار    iiرہا
فلک سے، عصر سے، انسان سے کب یہ اترے گا
حسینیت      کا      لہو      خلق      پر     اُدھار     iiرہا
سلام کی وہ روایت جس نے میر انیس سے سیّد آلِ رضا تک کئی منازل طے کی تھںب اب ماند پڑتی جا رہی تھی کہ ایک اور سیّد نے زیرِ نظر مجموعے سے سلام کی روایت کی جانب شہدائے کربلا کے عقیدت مندوں کی توجہ مبذول کرا کے اس مں پھر سے تازگی پیدا کر دی ہے۔ مں ان کے لئے دل سے دعا گو ہوں کہ وہ عقیدتوں کا یہ سفر یوں ہی جاری و ساری رکھںک۔
٭٭٭