جنابِ فاطمہ زہراؑ
 
پہلے بھگوان سے پوچھے کوئی لذت اس کی
تا
فاطمہؑ کرتی تھیں باتیں شکمِ مادر میں
پہلے  بھگوان  سے  پوچھے  کوئی لذت اس iiکی          مدتوں  حق  سے رہی عرش پہ صحبت اس iiکی
مستند   صورت  قرآن  ہے  طہارت  اس  iiکی          ہر  زمانے کے رشی کرتے تھے رغبت اس iiکی
نام   پر   فاطمہؑ   زہراؑ   کے   یہ   تاثیر  iiبڑھی          پاشا    بنت    عنب    ہو    گئی   توقیر   iiبڑھی
٭٭٭ 
طاہر   ایسی   کہ  نازاں  ہے  طہارت  اس  iiپر          اس   کی   پاکی   پہ  ہوئی  مُہر  نبوّت  اس  iiپر
ہوئی    اللہ   و   پیمبرؐ   کی   شہادت   اس   پر          حد     ہے     موقوف     رسالت     اس    iiپر
بے  پیئے  اس  کے  عبادت  کوئی مقبول iiنہیں          یہ  وہ  فاعل  ہے  جس  کا  کوئی  مفعول iiنہیں
٭٭٭ 
کیوں  بہکنے  لگی  تُو  پی کرے سوا روپ iiؔکنوار          مجھ  سے  مفعول کی تفصیل کو سن ہو iiہوشیار
فعل   جب   اس   پہ   ہوا   الفتِ  شاہ  iiابرار          ساتھ  بھی  اس  کے  ہے  عترت  آلِ  اطہار
سب وہ مفعول ہیں اس مئے کے جو میخوار بنے          جان  کو  بیچ  کے  اس  مئے  کے  خریدار  iiبنے
٭٭٭ 
تو  بھی  مفعول  ہے لے بن گئی قسمت iiتیری          حسن   تقریر  سے  ظاہر  ہے  عقیدت  iiتیری
فاطمہؑ   زہرا   سے   رعشن  ہے  محبت  iiتیری          آلِ  اطہار  کے  بھی  ساتھ  ہے  الفت iiتیری
نکلی   گنگا   سے   تو  پھر  اب  نہ  گنہگار  iiرہی          کوثر   و   خلد   کی   نعمات   کی   حقدار   iiرہی
٭٭٭ 
عقد   جب   مخبرِ   صادقؐ   کا  خدیجہ  سے  iiہوا          منحرف   ہو   گئیں   بی   بی   سے  زنانِ  iiمکّا
طعنہ  زن  ہو کے ہر ایک کرنے لگی ترکِ وفا          آپ   مغموم   و  حزیں  رہتی  تھی  اکثر  iiتنہا
ہے  عجب بات نہ ہوتا تھا کوئی جب گھر iiمیں          فاطمہؑ   کرتی   تھیں   باتیں   شکمِ  مادر  iiمیں
٭٭٭