جنابِ فاطمہ زہراؑ
 
کس سے تشبیہ دوں زہراؑ کو عجب ہے مرا حال
تا
حق نے بھیجا ہے تمہیں لطف و عنایت کے لیے
کس سے تشبیہ دوں زہراؑ کو عجب ہے مرا iiحال          سوچتی  ہوں  کوئی  ملتی  نہیں  عالم  میں  مثال
کی  نظر  مہرِ  مبیں  پر  تو  اسے  بھی  ہے iiزوال          کہوں  گر  ماہ  تو  اس  میں  نہیں  ہے  یہ iiکمال
اس  میں  تو  داغ  ہے  دھبہ ہے یہ نورانی iiہیں          آپ   کونین  میں  بے  مثل  ہیں  لاثانی  iiہیں
٭٭٭ 
آپ   کا   فرقۂ   نسواں   پہ   ہے   احسان  عظیم          صنف   نازک   کے  لیے  ہے  یہی  عمدہ  iiتعلیم
مثلِ   شوہر  کے  ملا  آپ  کو  بھی  قلبِ  iiسلیم          سب مٹا دیں وہ جہالت کی جو رسمیں تھیں قدیم
نا   پسندیدہ   جو   باتیں   تھیں   اسے   دور  کیا          حکم    جو    باپ   سے   پایا   اسے   منظور   iiکیا
٭٭٭ 
پارسائی   میں   خواتین   جو   مشہور   ہیں   آج          یہی   خاتونِ   قیامت   ہوئیں   ان   کی  iiسرتاج
اسی   بی   بی  نے  لیا  حق  سے  مناسب  یوراج          اسی   خاتون   سے   جاری   ہوا   پردہ   کا  رواج
آپ   سے   سب   نے   محبت   کا  طریقہ  iiسیکھا          خوبیاں     سیکھیں     ادب    سیکھا    سلیقہ    iiسیکھا
٭٭٭ 
پہلے  یوں  شوہر  و  زوجہ  میں مساوات نہ iiتھی          اب  زمانے میں طریقہ جو ہے یہ بات نہ iiتھی
سچ  یہ  ہے پہلے تو عورت کی کوئی ذات نہ iiتھی          غم  سے  اک دم کے لیے ترکِ ملاقات نہ iiتھی
بھیڑ  بکری سے بھی عورت کی تھی بد تر حالت          ان  سے  پہلے  تھی  عجب  طرح کی ابتر iiحالت
٭٭٭ 
آپ   سنسار  میں  آئیں  تو  گئی  خیر  سے  iiشر          آپ   کُل   پردہ   نشینوں   کی   بنی   ہیں   iiافسر
عین   احسان   و   کرم  آپ  کا  ہے  نسواں  iiپر          واہ    کیا    بات   ہے   اے   فاطمہؑ   نیک   iiسر
آپ  پیدا  ہوئیں  ہم  سب  کی ہدایت کے iiلیے          حق نے بھیجا ہے تمہیں لطف و عنایت کے لیے
٭٭٭