دستور المرکبات
 

حب کبریت
وجہ تسمیہ
حب کبریت’’ حب ترش مشتہی‘‘ کے نام سے بھی موسوم ہے۔

افعال و خواص اور محل استعمال
ہاضم طعام، کاسر ریاح، مقوی معدہ، نافع بواسیر۔

جزءِ خاص
زنجبیل و کبریت۔

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
زنجبیل ایک کلو ،نمک سیاہ، نمک سنگ ہر ایک ۲۵۰ گرام، قرنفل ، فلفل دراز، گندھک آملسار ہر ایک ۲۰۔۲۰ گرام اِلائچی خرد ۱۵ گرام۔ تمام ادویہ کو علیحدہ علیحدہ کوٹ کر چھان لیں۔ پھر آبِ لیموں کاغذی میں تر کر کے خشک کریں۔ اِسی طرح سات مرتبہ تر و خشک کر کے بقدرِ نخود گولیاں بنائیں۔

مقدار خوراک
۱تا ۴ عدد گولیاں بعد طعام۔

حب کتھ

وجہ تسمیہ
دواء کے ایک جز کتھ(کات سفید) کے نام سے موسوم ہے۔

افعال و خواص اور محل استعمال
آتشک و سوداوی امراض میں مفید ہے۔

جزءِ خاص
رسکپور

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
کافور رسکپور ،کات سفید ہر ایک ۱۵ گرام، موصلی سفید ۲۵ گرام، عرق پان ۶۰ گرام میں اچھی طرح کھرل کر کے چنے کے برابر گولیاں بنائیں اور استعمال میں لائیں۔

مقدار خوراک
ایک گولی مونیر منقی میں رکھ کر نگلیں۔
نوٹ : رسکپور کی وجہ سے اِس گولی کے کھانے میں یہ احتیاط رکھیں کہ دانتوں سے نہ لگے۔

حبِّ گلِ آکھ


وجہ تسمیہ
اپنے جزءِ خاص کے نام سے موسوم ہے۔

افعال و خواص اور محل استعمال
نافع وجع المفاصل، عرق النساء نیز اعصابی دردوں میں مفید ہے۔

جزءِ خاص
گُلِ مدار

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
گل، مدار، زنجبیل، فلفل سیاہ، برگِ بانس۔ ہم وزن ادویہ کو کوٹ چھان کر بقدرِ نخود گولیاں بنائیں اور استعمال میں لائیں۔

مقدار خوراک
۲ گولی، صبح و شام ہمراہ آبِ تازہ۔