دستور المرکبات
 

جواہر مہرہ

وجہ تسمیہ
مہرہ بتی کو کہتے ہیں اور چونکہ مختلف جواہرات کو محلول کر کے بتی کے مانند بنا لیا جاتا ہے لہٰذا اِس کو جواہر مہرہ کے نام سے موسوم کیا گیا ہے۔

افعال و خواص اور محل استعمال
جواہر مہرہ حرکاتِ قلب کی بے نظمی اور قلب کے ضعف کو دور کرنے کی بے مثل دواء ہے۔ علاوہ ازیں مفرّح و مقوِّی اعضاءِ رئیسہ اور جسم کے عام ضعف کو دور کرتا ہے۔ صرع اور اختلاج کے دوروں میں مفید ہے۔

جزءِ خاص
جواہرات

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
یاقوت رمانی ،یشب سبز، فیروزہ نیشاپوری،عقیق یمنی ،زمرد پکھراج، مروارید ناسفتہ، زہر مہرہ خطائی طباشیر کبود، بُسد احمر کہربائے شمعی، شاخِ مرجان، لاجورد مغسول، سندروس، ہر ایک ۱۰ گرام۔ ورقِ طِلاء ،ورق نقرہ ۵۔ ۵ گرام عرقِ کیوڑہ، عرقِ بید مشک حسب ضرورت لے کر اُس میں پندرہ روز کھرل کریں اور بتی کی شکل کا بنا کر محفوظ کر لیں۔

مقدار خوراک
۵۰ تا ۷۵ ملی گرام ہمراہ دواء المسک معتدل جواہر والی۔

جوہر سین
وجہ تسمیہ
جوہر سنی ، سم الفار (سنکھیا) کے جوہر کو کہتے ہیں۔ سم الفار کا پہلا حرف ’’س‘‘ ہے اِس لحاظ سے اِس کے نام پر اِس کو ’’جوہر سین‘‘ کہا گیا۔

افعال و خواص اور محل استعمال
مقوِّی باہ، مقوِّی اعضائے رئیسہ ، نافع امراض باردہ و بلغمیہ۔

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
سم الفار ۲۰ گرام کو شراب برانڈی میں خوب کھرل کریں۔ خشک ہونے پر مٹی کے ایک کوزہ میں رکھ کر دوسرا کوزہ اُس کے اوپر ڈھک دیں اور گل حکمت کر کے ہلکی آنچ پر جوہر نکالیں ، بالائی کوزہ پر کپڑا بھگو کر رکھیں اور خشک ہونے پر بدلتے رہیں تاکہ اوپری کوزہ میں جوہر منجمد ہو تا جائے۔ جوہر نکل آنے کے بعد آگ سے علاحدہ کر کے خوب سرد ہو جانے پر کوزہ کو کھولیں اور جس قدر جوہر جمع ہو گیا ہو اُسے چھُڑا کر محفوظ کر لیں۔
سم الفار کے بخارات آنکھوں کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔

مقدار خوراک
۳۰ تا ۶۰ ملی گرام ، ہمراہ مکھن و بالائی۔

جوہر منقیٰ
وجہ تسمیہ
جوہر رس کپور کا یہ دوسرا نام ہے، چونکہ اِس جوہر کو منقٰی میں رکھ کراستعمال کیا (نِگلا ) جاتا ہے ، اِس لئے اِس کو جوہر منقٰی بھی کہتے ہیں۔

افعال و خواص اور محل استعمال
آتشک، سوزاک ، وجع المفاحل اور نِقرس میں مفیدومستعمل ہے۔

جزءِ خاص
رس کپور

دیگر اجزاء مع طریقۂ تیاری
رس کپور، دارِشکنہ/دارِچکنہ، سم الفار ہر ایک دَس دَس گرام شراب برانڈی ۵۰ ملی لیٹر میں خوب کھرل کریں۔ خشک ہونے پر مٹی کے ایک کوزہ میں رکھ کر دوسرا کوزہ اوپر سے بند کر کے گلِ حکمت کریں اور ہلکی آنچ پر رکھ کر چار گھنٹے تک بطریق مذکور جوہر اُڑائیں۔ اِس کے بعد کوزے کو ٹھنڈا کر لیں۔ سرد ہونے پر چہرہ کو بچا کر کوزہ کھولیں اور جوہر کو احتیاط سے چھڑا لیں اور محفوظ کر لیں۔

مقدار خوراک
۳۰ ملی گرام، گولی بنا کر مویز منقّٰی میں رکھ کر بغیر چبائے ہوئے نگل لیں۔
نوٹ: اگر دانتوں اور مسوڑوں کو لگ گیا تو ورم آ جائے گا اور دانت کمزور ہو جائیں گے۔