دستور المرکبات
 

قرابادین (PHARMACOPOEIA )

تعارف
ترکیب ادویہ اور علم المرکبات کے حوالہ سے یونانیوں نے کئی اہم پیش رفت کںہ اور اِس موضوع پر ریسرچ و تحقیق کی ایک اساس فراہم ہوگی۔ اِس نقطۂ نگاہ سے ’’قرابادین‘‘ ’’Grabadiun ‘‘ کی ترتیب و تدوین اُن کا اہم علمی و فنّی کارنامہ ہے۔ اقربادین/قرابادین کا فنّی مفہوم ہے۔ ’’ایک ایسی جامع دستوری کتاب یا دستور جس مںب ادویہ مفردہ کو مرکب کرنے کے مختلف اصول و ضوابط سے بحث کی گئی ہو اور اُس کے لئے واضح اصول و قوانین طے کئے گئے ہوں ۔‘‘
یونانیوں نے دواسازی کے تعلق سے اگرچہ بہت سی اشکال ادویہ کی ایجاد کی اور ایک زمانہ تک لوگ اُس سے فیض یاب ہوتے رہے لیکن عرب اطِبّاء نے فنِّ دواسازی اور ترکیب ادویہ کو مزید مستحکم بنایا اور قرابادینوں کی تشکیلِ جدید کی، چنانچہ عربی عہد مں بعض قرابادینوں کو سرکاری حتثی حاصل ہوئی اور اُس دور کے تمام بیمارستانوں اور سرکاری شفا خانوں مںا کسی نہ کسی ’’سرکاری طور پر‘‘ تسلیم شدہ قرابادین کی ہدایات اور اصول کے مطابق ہی مرکبات تیار کئے جاتے رہے۔ قرابادینوں کے ارتقائی مراحل کا جائزہ لینے سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ اِس سلسلہ کی مستند ترین قرابادین یوحنّا بن ماسویہ الماردینی متوفی ۸۵۷ء کی ہے جو نویں صدی عیسوی مںس تحریر کی گئی۔ مرکبات کے حوالہ سے تصنیف کئے گئے مختلف قرابادینی ذخیروں اور قرابادینی تالیفات و تصنیفات مںس چند وقیع قرابادینیں یہ ہںا : شاپور بن سہل (متوفیٰ ۸۶۹ء) کی ’’کتاب الاقرباذین ‘‘،اسحق بن حنین (متوفیٰ ۹۱۱ء) کی’’ کتاب الاقرباذین‘‘ ابو النّصر عطار اسرائیلی کی تصنیف ، منہاج الدکّان فی ترکیب الاعیان، سہلان ابن کیسان (متوفیٰ ۹۹۰ء) کی’’ کتاب المختصر فی الادویۃ المرکبۃ فی اکثر الامراض‘‘، اِس سلسلہ مںس اہم مصادر کی حیثیت رکھتی ہںا ۔اِس موضوع پر تصنیف کی جانے والی کتب مںا ترتیب نُسُنح کو کئی اعتبار سے ملحوظ رکھا گیا ہے۔مثلاً امراض و علل کے ناموں اور اُن کے عنوانات کے لحاظ سے، اشکال ادویہ کے لحاظ سے، اعضاء انسانی کے مطابق امراض کی تقسیم کے لحاظ سے وغیرہ۔
چنانچہ مختلف عنوانات کے لحاظ سے جو قرابادینات و مصنَّفات ترتیب دئیے گئے ، اُن مںن شامل بعض اہم عربی، فارسی و اُردو قرابادینیں درجِ ذیل ہںی :

عربی کتب :
(۱) ابو بکر محمد بن زکریا رازی کی ’’الحاوی فی الطب‘‘ کی ایک جلد قرابادین پر مشتمل ہے۔
(۲) نجیب الدین سمر قندی (متوفیٰ ۱۲۲۲ئ) کی’’ کتاب الاقرباذین علی ترتیب العِلل‘‘۔
(۳) قرابادین قانون: بیاض کبیر، انڈین فارماکوپیاجیسی اہم کتب شامل ہںح اور اِن کو سرکاری درجہ بھی حاصل ہے۔

فارسی کتب:
قرابادین کبیر محمد حسین خان
قرابادین بقائی حکیم بقا خان
قرابادین ذکائی حکیم ذکا اللہ خاں
قرابادین شفائی حکیم شفا خاں
قرابادین اکبری حکیم اکبر ارزانی
قرابادین اعظم حکیم محمد اعظم خاں
قرابادین قادری حکیم محمد اکبر ارزانی
قرابادین احسانی حکیم احسان اللہ خاں

اُردو کتب:
قرابادین نجم الغنی حکیم نجم الغنی
بیاض کبیر
انڈین فارماکوبیا
نیشنل فارمولری CCRUM
قرابادین حاذق حکیم محمد حسن میرٹھی
قرابادین کوکبی حکیم نیاز محمد خاں کوکب
قرابادینِ لُطفی حکیم عبد اللطیف